شجاعت حسین کو سرپرائز!!! پرویز الہی فرنٹ فٹ پر آگئے، بڑا قدم اٹھالیا

لاہور: (ویب ڈیسک) ق لیگ نے عدالت میں جماعت کے نئے سربراہ کے انتخابی شیڈول پر الیکشن کمیشن کے حکم امتناعی کے خلاف درخواست دائر کردی۔ تفصیلات کے مطابق لاہورہائیکورٹ میں ق لیگ کے سیکرٹری کامل علی آغا نے صفدر شاہین پیرزادہ کے توسط سے درخواست دائرکی ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ

وزیراعلیٰ کےانتخاب کے موقع پر پارٹی سربراہ شجاعت حسین نے خط ڈپٹی اسپیکر کو لکھا۔ درخواست گزار نے موقف اختیار کیا ہے کہ چوہدری شجاعت حسین کا خط غیر قانونی ہدایات پر مبنی تھا، پارٹی کارکنوں نے اس خط کے خلاف شجاعت حسین کے گھر کے باہر بھر پور احتجاج کیا۔ انہوں نے کہا کہ پارٹی کی مرکزی ورکنگ کمیٹی نے اجلاس میں شجاعت حسین کی ہدایات کو غیرجمہوری عمل قرار دیتے ہوٸے انہیں پارٹی سربراہ کے عہدے سے ہٹا دیا۔ مرکزی ورکنگ کمیٹی نے پارٹی کے نئے سربراہ کے انتخاب کے لئے دس اگست کا انتخابی شیڈول جاری کیا،الیکشن کمیشن نے چوہدری شجاعت کی درخواست پر انتخابی عمل روکتے ہوئے حکم امتناعی جاری کردیا۔ الیکشن کمیشن نے مرکزی مجلس عاملہ نہ ہونے کے جواز پر غیر قانونی حکم دیا،اگرالیکشن کمیشن کےجواز کو تسلیم کرلیا جائے تو چوہدری شجاعت کیسے پارٹی سربراہ برقرار رہ سکتے ہیں۔ درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ الیکشن کمیشن کا انتخابی عمل روکنے کا اقدام غیر قانونی ہے لہٰذا عدالت الیکشن کمیشن کا حکم کالعدم قرار دے۔

دوسری جانب حکومت نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ہفتہ وارردوبدل پرمزید مشاورت کا فیصلہ کیا ہے اور پندرہ اگست کو پٹرولیم قیمتوں میں ممکنہ کمی کے ساتھ ہی قیمتوں کے تعین کے نئے طریقہ کار کی منظوری بھی متوقع ہے۔ ہائی اوکٹین کی طرح تمام پٹرولیم مصنوعات کو ڈی ریگولی کرنے پر بھی سنجیدگی سے غور شروع کر دیاگیا ہے۔ وزیراعظم شہبازشریف نے اس حوالے سے وزارت پٹرولیم اوروزارت خزانہ سے شاہد خاقان عباسی کی مشاورت سے رپورٹ مانگی تھی تاہم اس ایشو پر مشاورت کا عمل جاری رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ پٹرولیم کمپنیوں سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز سے بات چیت کی جائے گی، پندرہ اگست کو پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کا اعلان متوقع ہے، اس کے ساتھ ہی قیمتوں کے نئے فارمولے کی منظوری کا بھی امکان ہے۔ ہفتہ وار بنیادوں پر قیمتوں کے تعین کی وجہ تیل درآمد اور فروخت کرنے والی کمپنیوں کو قیمتوں کے اتار چڑھاؤ سے ہونے والے نقصان یا فائدے کو محدود کرنا ہے۔اس کے ساتھ ہی بین الاقوامی مارکیٹ میں قیمتوں کے اتار چڑھاؤ سے عوام کو جلدی فائدہ ہو سکے گا۔ حکومت اگلے مرحلے میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کو مکمل ڈی ریگولیٹ کرنے پر بھی سوچ بچار کر رہی ہے ، تاکہ قیمتوں کے تعین میں حکومتی عمل دخل ختم کر دیا جائے اور آئل کمپنیاں مارکیٹ ریٹ پر قیمتیں طے کریں۔ حکومتی کمپنی پی ایس او پٹرولیم کمپنیوں میں کسی مافیا کے قیام کی راہ روکے گی،نجی کمپنیاں کارٹیل کرنے کی کوشش کریں تو پی ایس او اسے توڑ دے گا،ڈی ریگولیٹ کرنے سے عوام تک پٹرولیم مصنوعات کی حقیقی قیمتیں پہنچیں گی۔ اس تجویز پر عاشورہ کی چھٹیوں میں بھی غور و خوض جاری رہے گا ، جس کے بعد حتمی فیصلہ کیا جائے گا،حکومت پہلے ہی ہائی اوکٹین کو ڈی ریگولیٹ کر چکی ہے جس سے پہلے مرحلے میں ہائی اوکٹین کی قیمتیں بڑھ گئیں مگر پھر کمی ہو گئی تھی۔

ادھر وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ عمران خان نے ملک کے قرضے 75 فیصد بڑھا کر ہمارے لیے مشکلات کے پہاڑ کھڑے کردیئے اب ہمیں دنیا سے قرض کے حصول میں دشواری کا سامنا ہے۔ کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا کہ ہمیں دنیا سے قرض کے حصول میں دشواری کا سامنا ہے، معاشی بحران سے نمٹنے کے لیے متحدہ عرب امارات پاکستان کے لیے ایک ارب ڈالر کی رقم بھیجے گا۔ مفتاح اسماعیل نے کہا کہ عمران خان نے ملک کے قرضے 75 فیصد بڑھا کر ہمارے لیے مشکلات کے پہاڑ کھڑے کردیئے، پاکستان کو دیوالیہ پن سے بچانے کے لیے مشکل فیصلے کیے، ہم اس وقت دبئی سے سستا پٹرول فروخت کررہے ہیں، چار ڈالر میں ملنے والی ایل این جی اب 40 ڈالر میں بھی دستیاب نہیں۔ آئی ایم ایف کی فنڈنگ سے متعلق بہت سی پیشرفت ہوئی ہیں، ستمبر تک مشکلات برقرار رہیں گی بعد میں بہتری آجائے گی، 6 ارب ڈالر کا خوردنی تیل اس سال درآمد کرنا پڑے گا، کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ بھی بلند ترین سطح پر ہے، شرح سود میں خوف ناک اضافہ ہوچکا ہے، ایکسچینج کمپنیوں کے بغیر معیشت مشکل سے نہیں نکل سکتی، ڈالر کو مزید کنٹرول کرنے کے اقدام کر رہے ہیں، کوئی ادائیگی روکی ہے نہ کبھی روکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ بجلی کی پیدوار بڑھانے کے لیے مزید جنریشن منصوبے لگانے کی اشد ضرورت ہے، کمرشل بجلی کچھ عرصے میں بہت سستی ہوجائے گی۔ زراعت سے متعلق انہوں نے کہا کہ زرعی پیداوار میں شدید کمی آئی ہے، کھاد بھی باہر سے منگوانی پڑتی ہے، چاول، گندم، مکئی اور گنے کی پیداوار بہت کم ہوئی ہے۔

Source link
hassannisar.pk

اپنا تبصرہ بھیجیں